تازہ ترین
ہوم / پاکستان / بی آر ٹی پشاور انڈر پاس ابھی زیر تعمیر ہےاس لیے گیس پائپ لائن۔۔۔!سوشل میڈیا پر تصویر وائرل ہونے کے بعدکے پی حکومت نے وضاحت جاری کردی

بی آر ٹی پشاور انڈر پاس ابھی زیر تعمیر ہےاس لیے گیس پائپ لائن۔۔۔!سوشل میڈیا پر تصویر وائرل ہونے کے بعدکے پی حکومت نے وضاحت جاری کردی

پشاور (مانیٹرنگ ڈیسک)سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی تصویر پر خیبرپختونخواہ حکومت کی وضاحت سامنے آئی ہے، صوبائی حکومت کا کہنا ہے کہ انڈر پاس ابھی زیر تعمیر ہے، متبادل گیس پائپ لائن بچھائے جانے کے بعد انڈر پاس میں موجود پائپ لائن نکال دی جائے گی ، گیس کا محکمہ وفاقی حکومت کے پاس ہوتا ہے، ن لیگ کی حکومت کے دوران پائپ لائن ہٹانے کی اجازت نہیں دی گئی تھی۔تفصیلات کے مطابق پشاور میٹرو بس منصوبہ ناصرف تحریک انصاف، بلکہ خیبرپختونخواہ کی صوبائی حکومت کیلئے سر درد بن چکا ہے۔ منصوبے کی لاگت میں ہوشربا اضافہ کے علاوہ اس میں اب تک کئی سنگین تکنیکی خامیاں سامنے آچکیں۔ کبھی منصوبے کے ٹریک کو تعمیر کے بعد

اکھاڑنا پڑتا ہے، تو کبھی تعمیر شدہ اسٹیشنز میں اکھاڑ پچھاڑ کرنا پڑتی ہے۔ابتدائی طور پر پشاور بی آر ٹی منصوبے کو 6 ماہ میں مکمل کرنے کا اعلان کیا گیا تھا، تاہم ڈیڑھ سال گزرنے کے باوجود منصوبہ اب تک مکمل نہیں ہو سکا۔اس تاخیر کے باعث منصوبے کی کل لاگت میں اربوں روپے کا اضافہ بھی ہوا ہے۔ جبکہ اب منصوبے کی ایک اور تکنیکی خرابی سامنے آئی ہے۔ منصوبے کے تحت عوام کی گزر گاہ کے طور پر تیار کردہ انڈر پاس کو کھول دیا گیا ہے۔ تاہم دلچسپ بات یہ ہے کہ انڈر پاس کے عین درمیان سے گیس پائپ لائن گزر رہی ہے۔ منصوبے کے انجینئر نے بنا اس تکنیکی خرابی کو دور کیے انڈر پاس عوام کیلئے کھول دیا ہے۔اس سنگین تکنیکی خرابی پر صوبائی حکومت کو شدید تنقید کاسامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ سوشل میڈیا پر بھی اس حوالے سے عوام نے اپنی رائے کا اظہار کرتے ہوئے صوبائی حکومت کو شدید تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ تازہ ترین تصاویر دیکھنے کے بعد عوام بی آر ٹی پشاور منصوبے کو تحریک انصاف کی حکومت کی بدترین نااہلی قرار دے رہی ہے۔ اس حوالے سے اب تحریک انصاف کی خیبرپختونخواہ حکومت کی جانب سے وضاحتی بیان جاری کیا گیا ہے۔صوبائی حکومت کا کہنا ہے کہ بی آر ٹی پشاور انڈر پاس ابھی زیر تعمیر ہے۔ متبادل گیس پائپ لائن بچھائے جانے کے بعد انڈر پاس میں موجود پائپ لائن نکال دی جائے گی۔ گیس کا محکمہ وفاقی حکومت کے پاس ہوتا ہے، ن لیگ کی حکومت کے دوران پائپ لائن ہٹانے کی اجازت نہیں دی گئی تھی اسی لیے پائپ لائن کو نکالے بنا ہی انڈر پاس کی تعمیر جاری رکھی گئی۔ تاہم اب چونکہ وفاق میں تحریک انصاف کی ہی حکومت ہے، اس لیے سوئی گیس کے محکمے کی اجازت کے بعد متبادل پائپ لائن بچھانے کا کام جاری ہے۔ متبادل پائپ لائن بچھانے کا کام مکمل ہوتے ہی انڈر پاس میں موجود پائپ لائن وہاں سے ہٹا دی جائے گی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *