ن لیگ ساتھ نہیں دیتی تو نہ دے ، پیپلزپارٹی نے تنہا کیا کرنے کافصلہ کرلیا، دھماکہ خیز اعلان کردیا گیا

0

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک) پنجاب میں پیپلز پارٹی نے تنہا احتجاجی سیاست کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ ن کی مصالحت پسندی کی وجہ سے پیپلزپارٹی کی حکومت کے خلاف مشترکہ بڑی مہم شروع کرنے کی خواہش کو بڑا جھٹکا لگا ۔ جس کے بعد پیپلز پارٹی نے پنجاب میں بھی کارروان بھٹو شروع کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے اور اس کے لاہور پہنچنے پر جلسہ کرنے کی تجویز پیش کی گئی ہے ۔کارروان بھٹو کے دوران بلاول بھٹو زرداری مختلف مقامات پر خطاب کریں گے جس کے دوران نیب کوشدید تنقید کا نشانہ بنایا جائے گا ۔ کارروان روہڑی سے شروع ہو کر براستہ رحیم یارخان، ملتان اور پھر لاہور پہنچے گا۔ کارروان رمضان سے قبل شروع کرنے کی تجویز ہے اور پارٹی قائدین لائحہ عمل مرتب کررہے ہیں،ذرائع نے بتایا کہ اس فیصلہ پرعمل کرنے میں تاخیر ہوسکتی ہے تاہم اس فیصلہ پر عمل کرنا وقت کا تقاضا ہے ۔کارووان بھٹو

کا مقصد عوام کی ہمدردیاں حاصل کرنا اوراحتسابی اداروں پر دباؤ ڈالنا ہے ، پیپلز پارٹی 12اپریل سے شروع ہونے والے قومی اسمبلی کے اجلاس میں بھی نیب کے خلاف آواز بلند کر ے اور پارلیمانی سطح پر دیگرجماعتوں کو بھی ہمنوا بنانے کی کوشش کرے گی۔دوسری جانب حمزہ شہباز کی گرفتاری کے لیے شہباز شریف کی رہائش گاہ پر چھاپے کے بعد اپوزیشن جماعتوں کے اہم رہنماؤں نے ن لیگ پر دباؤ بڑھانا شروع کر دیا ہے کہ وہ حکومت مخالف تحریک کا حصہ بن جائے۔رابطہ کرنے والوں میں فضل الرحمان، پیپلزپارٹی کے اہم رہنما اور دیگر سیاسی اپوزیشن جماعتوں کے اہم رہنما شامل تھے ۔ لیکن میاں شہباز شریف نے اس حوالے سے رضامندی کا اظہار کرنے کی بجائے فیصلہ کے لیے وقت طلب کر لیا ہے۔ذرائع کے مطابق اسی وجہ سے نیب چھاپے کے بعد سے لے کر اب تک شہباز شریف کی جانب سے سے کوئی سخت رد عمل بھی سامنے نہیں آ یا۔