بھارت جن 2افراد کو گرفتار کرکے پاکستانی دہشتگرد ظاہر کررہاہے وہ دراصل کون ہیں

0

اسلام آباد(نیوز ڈیسک) بھارت کی جانب سے خطے میں کشیدگی بڑھانے اور اپنے عوام کو جنگی جنون میں مبتلا کرنے کی ایک اور جھوٹی کہانی بے نقاب ہوگئی ہے۔آئی ایس پی آر کے مطابق بھارتی فوج اور میڈیا نے ایل او سی پر 21 اگست کو 2 دہشت گرد پکڑنے کا جھوٹا دعویٰ کیا۔ درحقیقت 21 اگست کو ایل او سی کے حاجی پیر سیکٹر میں محمد ناظم اور خلیل احمد نامی 2 کسانوں نے غلطی سے لائن آف کنٹرول کراس کی۔واقعہ پر فوجی حکام نے 27 اگست کو ہاٹ لائن پر رابطہ کیا، 3 ستمبر کو پاکستانی حکام نے اس معاملے پر بھارتی حکام سے ہاٹ لائن پر بات کی، بھارتی حکام نے دونوں پاکستانی شہریوں کی موجودگی کااعتراف

کیا۔ بھارتی حکام نے پاکستانی حکام کے مطالبے کی توثیق اور ضابطے پر عمل کا وعدہ کیا۔ترجمان پاک فوج کا کہنا تھا کہ واقعہ پر فوجی حکام نے 27 اگست کو ہاٹ لائن پر رابطہ کیا، 3 ستمبر کو پاکستانی حکام نے اس معاملے پر بھارتی حکام سے ہاٹ لائن پر بات کی، بھارتی حکام نے پاکستانی حکام کے مطالبے کی توثیق اور ضابطے پر عمل کا وعدہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ بھارت کی طرف سے جھوٹے آپریشن کے لیے راہ ہموار کی جارہی ہے، بھارتی میڈیا 2 پاکستانیوں کو دہشت گرد قرار دے کر حقائق مسخ کررہا ہے.خیال رہے کہ بھارت نے دو پاکستانی جاسوس پکڑنے کا دعویٰ کیا تھا،بھارتی فوج کے حکام نے مبینہ پاکستانیوں کی ویڈیو ایک پریس کانفرنس میں دکھائی اور دعویٰ کیا کہ اس ویڈیو میں دونوں افراد اپنا اعترافی بیان دے رہے ہیں۔ ان دونوں شہریوں کا تعلق لشکر طیبہ سے ہے اور انہیں 21 اگست کو گرفتار کیا گیا تھا۔بھارتی فوجی حکام کی جانب سے دکھائی جانے والی اس ویڈیو میں ایک شخص نے دعویٰ کیا کہ ہم نے کاچربان میں ٹریننگ کی ہے اور ہمارا تعلق لشکر طیبہ سے ہے۔اس ویڈیو میں بیان دینے والے شخص کی باڈی لینگوئیج تو مشکوک ہے ہی لیکن بھارتی فوج نے اس ویڈیو کو جاری کرنے سے قبل گوگل کر کے بھی نہ دیکھا یہ آیا پاکستان میں کارچربان نام کا کوئی علاقہ ہے بھی یا نہیں جس سے بھارتی فوج کا جھوٹ بے نقاب ہو گیا ہے۔