تحریک انصاف اسلام آباد میں دھڑہ بندی کھل کر سامنے آگئی

اسلام آباد(وہاب علوی سے)تحریک انصاف اسلام آباد میں دھڑہ بندی کھل کر سامنے آگئی۔ پارٹی تنظیم اور اسلام آباد کے ایم این ایز میں اختلافات شدت اختیار کرگئے۔ تفصیلات کے مطابق پاکستان تحریک انصاف اسلام آباد میں دھڑہ بندی کھل کر سامنے آگئی ہے۔ تحریک انصاف کی تنظیم سازی کے دوران وفاق کے تین حلقوں میں پارٹی تنظیم بنائی گئی جس کی منظوری چیف کنوینئر تحریک انصاف سیف اللہ نیازی کی جانب سے دی گئی لیکن اس کے بعد ایم این ایز نے اپنے طور پر پر کنوینئرز مقرر کردیئے ہیں۔

ذرائع کے مطابق تحریک انصاف کے ضلعی عہدیداران نے اسلام آباد کے حلقہ این اے 52,53,54, میں تنظیم سازی کا عمل مکمل کیا ، تمام عہدوں پر نامزدگیاں کی گئی باقاعدہ نوٹیفکیشن جاری کیا گیا اورتقریب حلف برداری میں نو منتخب عہدیداران نے حلف اٹھایا۔ ذرائع کے مطابق وفاق کے تین حلقوں کے ایم این ایز اسد عمر ، راجہ خرم نوازاور علی نواز اعوان نے پارٹی کی جانب سے تنظیم سازی پر شدید اعتراض کیا اور اپنے خاص بندوں کو پارٹی عہدے کا حلف اٹھانے سے بھی روک دیا جبکہ زیادہ تر عہدیداروں نے حلف اٹھالیا۔پارٹی کی جانب سے تنظیم سازی کے بعد تینوں ایم این ایز نے مل کر اپنے طور پر ریجن کے کنوینئرز مقرر کردیئےاور وفاق میں متبادل باڈی کھڑی کردی ہے پارٹی کی جانب سے تنظیم سازی میں منتخب ہونے والے عہدیدار اور وفاق کے ایم این ایز اب ایک دوسرے کے آمنے سامنے کھڑے ہوگئے ہیں۔ اس سے اسلام آباد میں تحریک انصاف میں اختلافات کھل کر سامنے آگئے ہیں۔ذرائع کا کہنا ہے کہ اس سارے معاملے میں اسد عمر اہم کردار ادا کررہے ہیں۔ پارٹی سے وابستہ لوگ سخت مایوسی کا شکار ہیںاور پارٹی چھوڑنے پر غور کررہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ کس دھڑے کا ساتھ دیں ، ایم این ایز کے پاس حکومت فنڈز اور طاقت موجود ہے اس لالچ میں لوگ ایم این ایز کا ساتھ رہے ہیں ۔ پارٹی چیئرمین عمران خان اور سیف اللہ نیازی سخت نوٹس لیتے ہوئے فوری کاروائی کریں۔